Taiz Hawa aur shab bhar barish - Sad Barish Poetry

 

Taiz Hawa aur shab bhar barish

Taiz Hawa aur shab bhar barish
andar chup aur bahar barish


aisay pehlay kab barsi theen
ankhen aur barabar barish


sahra to pyase ka piyasa
aur bharay darya par barish


is sur-taal ka aur maza tha
kachay GharTaiz ki chhat par barish


jhoom rahay hain bheeg rahay hain
pair parinday manzar barish


mein ne baadal ko bhaije thi
ik kaghaz par likh kar barish


mere ashkon se likhay ko
woh parhta hai aksar barish


kon yeh dekhe dida-e-par num
ik Barish ke Andar barish


yaad bohat atay hain Janan
haath mein haath aur sar par barish



تیز ہوا اور شب بھر بارش اندر چپ اور باہر بارش

ایسے پہلے کب برسی تھیں آنکھیں اور برابر بارش

صحرا تو پیاسے کا پیاسا اور بھرے دریا پر بارش

اس سر تال کا اور مزا تھا کچے گھر کی چھت پر بارش

جھوم رہے ہیں بھیگ رہے ہیں پیڑ پرندے منظر بارش

میں نے بادل کو بھیجی تھی اک کاغذ پر لکھ کر بارش

میرے اشکوں سے لکھے کو وہ پڑھتا ہے اکثر بارش

کون یہ دیکھے دیدۂ پر نم اک بارش کے اندر بارش

یاد بہت آتے ہیں جاناںؔ ہاتھ میں ہاتھ اور سر پر بارش

Post a Comment

0 Comments