Raat je khol ke phir main ne dua mangi hai - Urdusad

"Raat ji khol ke phir main ne dua mangi hai

Aur ek cheez barri besh baha mangi hai"

"Aur woh cheez nah doulat, nah makan hai, nah mehal

Taaj manga hai, nah Dastaar o quba mangi hai"


"Nah to qadmon ke taley farsh-e gohr manga hai

Aur nah sir par kulah baal humma mangi hai"


"Nah sareeqy safar o Zad-e safar manga hai

Nah sadaye Jarass o bangh Durra mangi hai"


"Nah Sikandar ki tehran fatah ka parcham manga

Aur nah Manind khizar umar baqa mangi hai"


"Nah koi ohda, nah kursi, nah laqab manga hai

Nah kisi khdmtِ qaumi ki jaza mangi hai"


"Nah to mhmanِ khusoosi ka Sharf manga hai

Aur nah mehfil mein kahin saddar ki ja mangi hai"


"Nah to manzar koi shadab o hasin manga hai

Nah sehat bakhsh koi aabb o sun-hwa mangi hai"


"Mehfil aish nah samanِ Tarb manga hai

Chandni raat nah ghanghor ghata mangi hai"


"Bansuri mangi, nah taaos, nah barbat, nah rubab

Na koi matrabe sheree nawa mangi hai"


"Chain ki neend, nah aaraam ka pehlu manga

Bikhat bedaar, nah Taqdeer rasa mangi hai"


"Nah to ashkon ki farawani se mangi hai nijaat

Aur na  apne marze dil ki Shifa mangi hai


"Sun ke heran hue jatay hain arbab-e-chaman

Aakhirash! kon si pagal ne dua mangi hai"


"Aa! tre kaan mein keh dun ae naseem sehri!

Sab se pyari mujhe kya cheez hai? kya mangi hai"


"Woh sra-paye reham Ghumbade-Hazra ki Makaye

Unn ki ghulami mein marne ki dua mangi hai"


رات جی کھول کے پھر میں نے دعا مانگی ہے اور اٍک چیز بڑی بیش بہا مانگی ہے

اور وہ چیز نہ دولت، نہ مکاں ہے، نہ محل تاج مانگا ہے، نہ دَستار و قبا مانگی ہے

نہ تو قدموں کے تلے فرشِ گُہر مانگا ہے اور نہ سر پر کُلہِ بالِ ہُما مانگی ہے

نہ شریکٍ سفر و زادٍ سفر مانگا ہے نہ صدائے جرس و بانگِ درا مانگی ہے

نہ سکندر كی طرح فتح کا پرچم مانگا اور نہ مانندِ خضر عمرِ بقا مانگی ہے

نہ کوئی عُہدہ، نہ کرسی، نہ لقب مانگا ہے

نہ کسی خدمتِ قومی کی جزا مانگی ہے

نہ تو مہمانِ خصوصی کا شرف مانگا ہے

اور نہ محفل میں کہیں صدر کی جا مانگی ہے

نہ تو منظر کوئی شاداب و حسیں مانگا ہے

نہ صحت بخش کوئی آب و ہوا مانگی ہے

محفلِ عیش نہ سامانِ طرب مانگا ہے

چاندنی رات نہ گھنگور گھٹا مانگی ہے

بانسری مانگی، نہ طاؤس، نہ بربط، نہ رُباب

نہ کوئی مطربۂٍ شیریں نوا مانگی ہے

چین کی نیند، نہ آرام کا پہلو مانگا

بختِ بیدار، نہ تقدیرِ رسا مانگی ہے

نہ تو اشکوں کی فراوانی سے مانگی ہے نٍجات

اور نہ اپنے مرَضٍ دل کی شفا مانگی ہے

سُن کے حیران ہوئے جاتے ہیں اربابِ چمن

آخرش! کون سی پاگل نے دعا مانگی ہے

آ! ترے کان میں کہہ دوں اے نسیمِ سحری!

سب سے پیاری مجھے کیا چیز ہے؟ کیا منگی ہے"

"واہ سری پائے ریحام گھمبڑے-ہزارہ کی مکائے
ان کی غلامی میں مرنے کی دعا مانگی ہے"

Post a Comment

0 Comments